Please meet my Grandmother

In August of 2015, my maternal grandmother Farhat Jahan Begum visited Washington DC from her home in Pakistan. During that visit, she told me a very compelling story about her truly harrowing trip to Pakistan from India when the two countries split up in 1947.

I wanted to make her story available to others so I recorded this 35-minute interview with her in Urdu and transcribed it and then translated it to English. Please take a look.

It should be understood that this is one woman’s viewpoint as told from her memory decades after the events happened. I cannot guarantee the accuracy of her account. In particular the most significant events of this interview occurred at the Biyaas train station in India. But I cannot find any other record of this station existing. Furthermore deadly pogroms likes she describes were happening all over India and Pakistan to people of different religions. This interview should not be considered as an endorsement of any of those pogroms nor should it be considered to be representative of what many other people experienced.

A more journalistically rigorous report about these events can be found in this Washington Post Article

If you find errors in the Urdu transcription or English translation, please let me know by sending me an email at saqib.ali.75@gmail.com

Saqib: Grandma, thank you for giving me this interview. Let’s get started. Ok?
Farhat: Ok.
Saqib: First, tell me your full name.
Farhat: My name is Farhat Jahan Begum.
Saqib: Ok… And your…
Farhat: My age?
Saqib: No… When were you born?
Farhat: I was born in Ninteen… thirty-two.
Saqib: Ok… And do you know the date?
Farhat: 25th of December… sorta.
Saqib: Are you certain about that?
Farhat: No. I am not certain. I’m giving you an estimate. I don’t remember exactly.
Saqib: Ok … But are you sure about 1932?
Farhat: Yes, I am sure about year and the month of December too.
Saqib: Ok… and where were you born?
Farhat: I was born in [New] Delhi [India].
Saqib: Ok. Were you born at home or in the hospital or where?
Farhat: I was born at home. Because in those days children were born at home.
Saqib: Ok. At the time, of course Pakistan had not yet been created so you were living in India.
Farhat: Yes, we lived in India.
Saqib: So your childhood was spent in India?
Farhat: Yes we spent my childhood in India. We had a very nice childhood. We had Indian friends, etc. But our school was for only Muslim girls. It was named The Anglo-Arabic school. I went up to ninth-grade in that school before I came to Pakistan.
Saqib: Ok… So was your school good?
Farhat: Yes. Our school was very good. I would take part in sports there and I was good student. Every year, there would be a school-wide Olympics. So I used to run races during that competition: in hurdle races, in relay races, in obstacle races. I took part in all of them.
Saqib: Ok. You learned to read and write?
Farhat: Yes we learned to read and write there. And after ninth grade, we came to Pakistan during the partition.
Saqib: And when you learned to write, in which language? in Urdu, in Hindi?
Farhat: No. Only in Urdu. Not in Hindi. Not in English. Only in Urdu.
Saqib: And you said that there were only Muslim girls in your school.
Farhat: Yes, it was a school only for Muslims.
Saqib: What about in your neighborhood? Were there only Muslims or Hindus or mixed?
Farhat: There were Muslims. And there were Hindus. Both lived together in our mixed neighborhood with no problem. There was a man who lived in our alley who raised cattle for a living. He would sell milk from his cows and buffaloes
Saqib: Did you get milk?
Farhat: Yes, we used to get very good milk.
Saqib: And your girl-friends?
Farhat: Back in those days we couldn’t visit with girl-friends at their homes. I only used to meet my girlfriends at school.
Saqib: And how many siblings were you?
Farhat: We were eight siblings by the grace of Allah.
Saqib: Ok. And who lived in your house?
Farhat: In our house, we had only our parents and us eight siblings. No, wait… there were seven siblings. The eighth one was born in Pakistan.
Saqib: Ok. How about any grandparents or uncles or aunts? Did any of them live with you?
Farhat: Oh yes, my paternal-grandmother lived with us too.
Saqib: Got it. Anyone else?
Farhat: No, nobody else…except yes, we had a domestic-worker.
Saqib: Ok, a servant?
Farhat: Yes, the servant lived with us.
Saqib: His age?
Farhat: The servant’s age?
Saqib: Yes. I mean, was he was younger than you?
Farhat: No, no. He was older. We were all small kids. He was older than all of us.
Saqib: Ok. So when the Partition of India happened, tell me what was going on at that time? What did you see? What did you hear? Tell the story from the beginning. What were the circumstances in India at the time? How did those circumstances change? And why did you leave India to go to Pakistan at the time?
Farhat: When Pakistan was created, my father was a government officer. So they asked all the government officers if they wanted to go to Pakistan or stay in India. Our father said that we wanted to go to Pakistan. We couldn’t stay in India because there were daily communal conflicts and people going into each others’ neighborhoods and killing each other.
Saqib: What type of fights?
Farhat: Well, it was just beginning, but there were inter-communal killings.
Saqib: Fights among who?
Farhat: Hindus and Muslims. Hindus were killing Muslims.
Saqib: Ok.
Farhat: The Hindus would say to the Muslims: Get out of here. Your country is Pakistan. Go there.
Saqib: Ok.
Farhat: Muslims would say: Ok, we will go. But we can’t do it suddenly right away. Anyway, in Delhi is the historic Red Fort.They set up a shelter for Muslims there so they could seek refuge from the communal violence in the city. So they took us from our homes to the Red Fort in trucks. We got there and we were safe. They had police and everything outside the gates of the fort.
Saqib: Ok, but wait, the fighting you were talking about, was it armies battling each other?
Farhat: No, no. It was not amongst armies, it was among the people themselves. Between Hindus and Muslims.
Saqib: You mean between regular people?
Farhat: Yes regular people! I didn’t see any police or army. Actually we didn’t leave the the house very much. We were under orders to stay home. But we didn’t see any police. When the violence got worse, then it was our time to evacuate. So the people from my father’s office told us the date when the truck would come to evacuate us and take what little luggage we could pack.
Saqib: Ok, grandma. Just hang on a second please.
ثاقب: پہلی بات آپ اپنا پورا نام بتائیں۔۔۔
فرحت: میرا نام ہے فرحت جہاں بیگم
ثاقب: اچھا۔۔۔ آپ کی؟
فرحت: عمر؟
ثاقب: نہیں۔۔۔ آپ کی پیدائش؟
فرحت: میری پیدائش ہے انیس سو بتیس
ثاقب: اچھا۔۔۔ اور تاریخ پتا ہے آپ کو؟
فرحت: تاریخ دسمبر کی پچیس تاریخ۔۔۔
ثاقب: آپ کو یقین ہے؟
فرحت: نہیں۔۔۔ یقین نہیں ہے، اندازاً میں بتا رہی یوں۔۔۔ مجھے تو یاد نہیں ہے۔۔۔
ثاقب: اچھا۔۔۔ مگر انیس سو بتیس کا تو پتہ ہے؟
فرحت: ہاں وہ تو پتا ہے اور دسمبر کا مہینہ بھی پتا ہے۔
ثاقب: اور آپ کی پیدائش کہاں ہوئی؟
فرحت: دہلی میں ہوئی ہے۔
ثاقب: اچھا۔۔۔ دہلی میں ہوئی ہے اور وہاں ہسپتال، گھر کہاں؟
فرحت: پہلے تو گھر میں ہی ہوتے تھے، تو میں گھر میں ہی ہوئی ہوں۔
ثاقب: اور۔۔۔ جب پاکستان نہیں تھا، انڈیا تھا۔
فرحت: انڈیا میں ہم رہتے تھے۔
ثاقب: تو آپ کا بچپن وہیں گزرا انڈیا میں؟
فرحت: جی وہیں گزرا، بہت اچھا گزرا۔
ثاقب: اچھا۔۔۔
فرحت: بڑا اچھا۔۔۔ ہمارے انڈین وغیرہ بھی دوست تھے، ہماری دوستیں بھی تھیں انڈین۔۔ مگرہمارا جو اسکول تھا، وہ مسلمانوں کا تھا، عورتوں کا تھا پھر۔
ثاقب: اچھا۔۔۔
فرحت: ہاں اینگلو عربی سکول تھا، اس میں پڑھتی تھی۔
ثاقب: اچھا۔۔
فرحت: میں وہاں سے 9th پاس کرکے آئی تھی پاکستان۔
ثاقب: اچھا۔۔۔ تو آپ کا اسکول اچھا تھا؟
فرحت: ہاں اسکول ہمارا بہت اچھا تھا۔ میں وہاں پہ اسپورٹس میں بھی حصہ لیتی تھی اور میں پڑھائی میں بھی اچھی تھی، اور بس۔۔۔ ہمارے۔۔۔ ہر سال اولمپکس ہوتے تھے ہمارے۔
ثاقب: اچھا۔۔
فرحت: تو میں بھی اس میں ریس میں حصہ لیتی تھیں ہرڈل ریس، ریلے ریس اور فٹل ریس۔۔ اس سب میں بھی حصہ لیتی تھی میں بھی۔۔۔
ثاقب: اچھا۔ مطلب آپ نے پڑھنا لکھنا سیکھا؟
فرحت: جی سیکھا، بس وہاں سے نائنتھ 9th پاس کرکے آئے تھے ہیں پھر ہم پاکستان آگئے۔۔
ثاقب: اور مطلب جب پڑھنا لکھنا آپ نے سیکھا، اردو میں، ہندی میں؟ کونسی زبان میں؟
فرحت: نہیں، اردو میں۔ نہ ہندی میں، نہ انگلش میں، سب اردو میں۔
ثاقب: اور آپ نے کہا کہ آپ کے اسکول میں صرف مسلمان لڑکیاں تھیں۔۔ تو آپ کے علاقے میں، مطلب۔۔ جو آپ کے پڑوس میں۔۔۔ جو مسلمان تھے ہندو تھے، سب تھے؟
فرحت: مسلمان بھی تھے ہندو بھی تھے، دونوں رہتے تھے مل جل کر، کوئی ایسی بات نہیں ہوتی تھی وہاں پہ وہ بھی رہتے تھے وہ دودھ والے۔۔۔ گھونسی جو کہتے ہیں۔۔ جو گائے بھینسیں پالتے ہیں دودھ بیچتے ہیں۔ ہماری گلی میں رہتے تھے۔۔۔ تو وہ ہمیں۔۔
ثاقب: آپ کو دودھ ملتا تھا؟
فرحت: جی ہمیں دودھ ملتا تھا وہ ہمیں بہت اچھادودھ دیتے رہے ہیں۔
ثاقب: اور آپ کی سہیلیاں؟
فرحت: ہماری سہیلیاں بس ایسی تھیں۔ اس زمانے میں ہم ان کے گھر نہیں جاسکتے تھے۔ ہم لوگ سکول میں ملا کرتے تھے اچھا کبھی گھروں میں آنا جانا نہیں تھا ہمارا.
ثاقب: اور آپ کتنے بہن بھائی تھے؟
فرحت: ہمارے ماشااللہ آٹھ بہن بھائی تھے۔
ثاقب: اچھا۔ اور آپ کے گھر میں کون کون رہتا تھا؟
فرحت: بس ہمارے گھر میں ہم صرف ماں باپ اور ہم آٹھ۔۔۔ نہیں۔۔۔ سات بہن بھائی تھے، ایک پاکستان میں آکے ہوا تھا
ثاقب: اچھا، اچھا اور مطلب کوئی نانا، نانی، ماموں، ممانی کوئی نہیں تھا؟
فرحت: نہیں، ہماری دادی ہمارے ساتھ رہتی تھیں۔
ثاقب: اچھا دادی ساتھ رہتی تھیں
فرحت: ہاں دادی بھی رہتی تھی ساتھ ہمارے۔
ثاقب: اور کوئی نہیں؟
فرحت: نہیں اور کوئی نہیں۔ ہمارا ایک خانساماں تھا۔
ثاقب: اچھا۔ نوکر؟
فرحت: نوکر تھا ہمارے ہمارے ساتھ.
ثاقب: اس کی عمر مطلب؟
فرحت: نوکر کی عمر؟
ثاقب: ہاں مطلب آپ سے کم تھا؟
فرحت: نہیں بڑا تھا ہم سب چھوٹے تھے، وہ بڑا تھا
ثاقب: اچھا. تو مطلب جب پارٹیشن آیا تو آپ بتائیں اس وقت پہ کیا ہو رہا تھا؟ آپ نے کیا دیکھا؟ کیا سنا؟ کہانی بتائیں، شروع سے کہ حالات کیا تھے انڈیا میں اس وقت اور کیسے وہ حالات بدلے اور پارٹیشن کے وقت آپ کیوں انڈیا چھوڑ کے پاکستان آئیں؟
فرحت: جب پاکستان بنا تو ہم سب لوگوں نے یہ شروع کردیا تھا کہ گورنمنٹ افسر نے والد ہمارے سے کہا کہ تم پاکستان جانا چاہتے ہو یا انڈیا؟ تو ہمارے والد نے کہا کہ ہم پاکستان جانا چاہتے ہیں اور یہاں نہیں رہ سکتے ہم اور پھر وہاں آئے دن جھگڑے ہوتے رہتے تھے، اس کو مار دیا حملے آور چلے آئے۔
ثاقب: جھگڑے کیسے مطلب؟
فرحت: بس وہ مار ڈار شروع ہو رہی تھی تھوڑی تھوڑی.
ثاقب: کن کے بیچ؟
فرحت: ہندو اور مسلمانوں کے۔ مسلمانوں کو مار رہے تھے۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: وہ مسلمانوں کو کہتے تھے تم جاؤ یہاں سے، تم اپنے پاکستان جاؤ، تمہارا پاکستان ہے۔ پاکستان جاؤ۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: سب کہتے تھے ہم جائیں گے ہم سب ایک دم کیسے جا سکتے ہیں، تو ظاہر ہے سب نے انہیں کہا۔۔۔ ہمارے والد نے۔۔ وہاں انہوں نے ایک ہمارے لئے بنا دیا تھا۔۔۔ لال قلعہ تھا۔ لال قلعہ میں ہمارا انہوں نے بنا دیا تھا ایک مسلمانوں کو وہاں جاکر بٹھائیں۔ شہر میں گڑبڑ ہو رہی تھی تو ٹرکوں میں ہمیں وہاں جاکر رہیئے آپ، وہاں محفوظ(safe) بھی تھا وہاں پولیس بھی تھی باہر کی۔
ثاقب: مگر جو لڑائی شروع ہو رہی تھی وہ فوج کے بیج میں؟
فرحت: نہیں نہیں فوج کے بیچ میں نہیں تھی، آپس میں تھی آپس میں مسلمان اور ہندوؤں کے۔
ثاقب: لوگوں میں؟
فرحت: ہاں لوگوں میں۔ کوئی پولیس میں نے نہیں دیکھی۔
ثاقب: اچھا. تو مطلب۔۔۔
فرحت: اصل میں ہم گھر سے باہر بھی کم نکلتے تھے، ہمارے آرڈر نہیں تھا ہم لوگوں کو باہرنکلنے کا۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: تو بس دیکھی نہیں ہم نے۔۔ پولیس نہیں دیکھی۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: مگر یہ کہ۔۔۔ پھر یہ ہوا کہ جب اتنے زیادہ جھگڑے بڑھے تو پھر ہم وہاں سے۔۔۔ ہمارے نکلنے کا ٹائم آ گیا وہاں سے۔ ہمارے دفتر والوں کو کہا کہ آپ کی بس آئے گی اور آپ کو لے کر جائے گی۔ ٹرک آئے گی تو آپ کا جو سامان ہے لے جائیں تو ہم تھوڑا سا سامان لے گئے۔
Break in video due to technical reasons
Saqib: Ok, grandma. Tell us about your experience of the Partition. For someone who knows nothing about it, tell the whole story from the beginning. What did you see? What did you hear? What were the circumstances? What happened and why?
Farhat: Well, we were just little girls at the time. We wouldn’t leave the house much. Our mother wouldn’t take us daughters anywhere. So for example if someone died, our mother would go visit them without us. She would go alone. Us girls would stay at home.
Saqib: Why? Was it dangerous? Or for some other reason?
Farhat: Because it was unsafe and she didn’t want to take any risks during the trip.
Saqib: Ok.
Farhat: We would hear news that there was an attack on such-and-such neighborhood one day and some other neighborhood the next day. Then one day, we heard that they were going to attack our neighborhood.
Saqib: Ok. Who was attacking?
Farhat: Indians. Hindu people. Hindus who lived near us were joining the attacks.
Saqib: People in your neighbor?
Farhat: Yes, our own neighbors turned against us, all of them.
Saqib: Ok. You mean no army, no police?
Farhat: No. It wasn’t the army or police. We didn’t see any army or police in our neighborhood at all. We only saw them after they evacuated us on our way to the shelter. Anyway, it was during the hot summer. So we used to sleep on the rooftop of our house. All night long we would hear bullets being fired and striking the houses around us and whizzing by over our heads. So my mother and other women from our neighborhood would gather us little kids together in their laps and take us to one neighbor’s house that had a bigger, stronger gate than our house. The women and children would gather inside that house while the men would stand guard outside with big sticks or guns. We would sit there together and pray for deliverance, prostrating to Allah to save us and our children. Morning would bring relief because the mobs would only attack at night. We would emerge from the house.
Saqib: They would attack at night?
Farhat: Yes. They only attacked at night. They didn’t come during daylight. Then one day a truck came for us. Our father said it’s time to go.
Saqib: To go where?
Farhat: To go to the Red Fort.
Saqib: Can you explain a little bit for those who don’t know, what the Red Fort is?
Farhat: It was a big beautiful Fort. We could go there. We could go and pray.
Saqib: Was there a mosque in the fort?
Farhat: Yes there was a mosque too
Saqib: Was the Red Fort an old place?
Farhat: Yes! Very old. It was build in the days of Moghul Emperor Shah Jahan. It was old and very beautiful
Saqib: Was that the same place as the Jama Mosque?
Farhat: No, the Jama mosque was in the city. The Red Fort was some ways outside the city. So the truck dropped us off there with whatever luggage we could manage to carry.
Saqib: So when you left home…..
Farhat: When we left the house, our mother had some jewelry and some money that we could take. She tied it up on my back.
Saqib: On your back?
Farhat: Yes on my back. Right here.
Saqib: Why?
Farhat: Because my mother was pregnant at the time so she couldn’t tie it to her belly. So she tied the bag of jewelry and money to my back.
Saqib: Under your clothes or outside your shirt?
Farhat: No, underneath my clothes. She tied the bag to my back.
Saqib: To hide it?
Farhat: Yes, to hide it. I wore a shirt on top to hide the bag. We had no clue where we would end up or for how long. Who knew if we would have money or food to eat? So she hid the bag of jewelry on my back in case we needed to sell it.
Saqib: When you left your house, was it sudden?
Farhat: Yes! Very sudden. We heard one day that our neighborhood was going to be attacked. So we snuck out through the alleyways so nobody would see us. And we made it to my maternal grandmother’s house.
Saqib: Had you packed any luggage?
Farhat: Not really. We could barely pack anything. All we had was what we could carry in our hands and the clothes on our back. We had one suitcase. My mother had been saving up some clothes and silverware dishes for my dowry. So she put that stuff into that suitcase and that’s the suitcase we put into the truck.
Saqib: So one suitcase for the whole family?
Farhat: Yes, just one suitcase for the whole family. And we carried some foodstuff too: flour, rice, lentils, etc. When we were at the Red Fort someone would come by and give us rations: a fistful of rice per person.
Saqib: Ok, so a truck came and picked your family up to take them to the Red Fort…
Farhat: Not just our family. There were lots of other families crammed into the back of the truck too. It dropped us off at the Red Fort. So we setup a spot for our family there and we put up curtains for privacy/modesty because there were men all around. We setup stoves so that we could cook.
Saqib: Ok were you indoors or outside?
Farhat: We were in the Fort’s courtyard. So totally outdoor. There was no space inside.
Saqib: Right under the sun?
Farhat: Yes. We were exposed to the elements all day and all night long. People would try to shelter under blankets.
Saqib: So, it was August, right?
Farhat: Yes.
Saqib: It must have been hot.
Farhat: It was very hot. But then finally our turn to leave came.
Saqib: Ok, so how long were you in the Red Fort?
Farhat: We were there for three or four days.
Saqib: As refugees?
Farhat: Yes as refugees.
Saqib: And did you get food there?
Farhat: Yes, but it was the most meager staples. One fist full of rice per person. So we got eight fistfuls for our family.
Saqib: Ok. Just rice?
Farhat: Yes, just rice. We cooked it on the stoves we brought with us. My mother bought the stove because she knew she would have to feed eight kids and the servant who came with us.
Saqib: Ok, you stayed in the Red Fort for two or three days. Then what happened?
Farhat: We started hearing shooting all night long there too. We were worried the mobs would attack us there too. But the mobs couldn’t come there because there was a lot of police there. And the fort had a very large gate that the mobs wouldn’t have been able to penetrate. But nevertheless, we were scared.
Saqib: Ok.
Farhat: So all the refugees at the Fort had been assigned a number. And people were being sent to Pakistan based on their number. So one day, they told us our it was our turn to go to Pakistan. A truck was coming for us.
Saqib: Ok.
Farhat: We were so excited. When the truck came, everyone made a mad dash to get onto the truck. People were tossing their belongings in and holding as many kids in their lap as they could. Nobody wanted to be left behind.
Saqib: Ok. So your whole family was in the truck?
Farhat: Well, there were lots of other people in the truck too.
Saqib: Standing in truck? In the rear-compartment of the truck?
Farhat: It was an open pickup truck. The kind the military uses. We were standing in the pickup bed.
Saqib: It had no roof?
Farhat: Open.
Saqib: Ok.
Farhat: So the truck took us to the station.
Saqib: You mean train station?
Farhat: Yes, train station. We didn’t know which train station it was. It was totally dark. No light, nothing. They dropped us off at the train platform.
Saqib: Where did they drop you off?
Farhat: At the platform, where the train arrives.
Saqib: Ok. Ok.
Farhat: So there was a train parked at the platform. So all the refugees made a mad dash to get on the train. It was so chaotic. Because nobody wanted to be left behind at the train station. Everyone knew that if they were left behind at night, they would have been murdered.
Saqib: Because the mobs had come to the train stations too?
Farhat: Yes. The mobs would come to the train stations because they knew that’s where the Muslim refugees would have to come through. So we got onto the train.
Saqib: Was there space in the train?
Farhat: No. It was totally full. We barely got our suitcase in. People were pushing their kids in through the windows. That’s how crowded it was. The train was so full that passengers were even stuffed into the train’s bathroom. Where else could they fit?
Saqib: Was it hot? Did the train have air-conditioning?
Farhat: You’ve got to be kidding! It was so hot. There was no air-conditioning. But the windows were open and some breeze would come in. When the train started moving we all said a prayer of thanks that we got out of there safely. Saharanpur was the first train stop. We were so frightened that whenever the train stopped, the Hindu mobs would get us.
Saqib: At the stations?
Farhat: Yes at the stations. But we were relieved. Because the mob at the Saharanpur station was Muslim. So they didn’t harm us.
Saqib: So your train was heading towards Pakistan?
Farhat: Yes. It was going towards Pakistan.
Saqib: And there were trains coming the other way from Pakistan?
Farhat: Yes, but we hadn’t seen them yet. We were early on in our trip.
Saqib: So Muslims were leaving India and going to Pakistan while the Hindus and Sikhs were leaving Pakistan to come to India?
Farhat: Yes, the Hindus and Sikhs were coming to India.
Saqib: But what happened to your home that you left behind?
Farhat: We got some money for that. Our father tried and got some money.
Saqib: From who? Do you know?
Farhat: He had to send some letters to his office in India and they gave him some money.
Saqib: From the government?
Farhat: Yes, from government. There was such a severe heat along the way. Anyway, our train stopped in Bhawalpur. There were lots of Muslims at the Bhawalpur station. They cooked and gave us food to eat.
Saqib: In Bahawalpur?
Farhat: Yes. In Bahawalpur they fed us. And they warned us that the next few stops would be dangerous for us. There would be Hindu mobs trying to kill us. So they told us to close windows and cover them with our suitcases. It made us wonder how we would stay alive without windows open. Some people kept their windows half open, some were open slightly. But then as we got closer to the next station and more scared, we closed all the windows and people barricaded them with our suitcases and whatever other items we had so that nobody could get in through them.
Saqib: Which station was this?
Farhat: Well at the Bahawalpur station they told us there was danger ahead. So this was as we were approaching the next station: Sarhind. Then we got to Sarhind station. There was a jungle on the left side and the train platform on the right side. There we saw a mob of little boys, teenagers and men carrying sticks, holding guns, and makeshift weapons. The police were there with their bayonets too.
Saqib: So it was a mob of Hindu people with sticks?
Farhat: Yes, they had sticks and other weapons. They were on the left side of the train separated from us by a fence. The mob was trying to jump over the fence and kill us in the train. But we could see the police and who knows who else were holding them back.
Saqib: Ok.
Farhat: When we were stopped at that station, I don’t know if it was the Hindus or who but they said that the train engineer had to go get water.
Saqib: What do you mean?
Farhat: Back in those days they used to say that the engineer had to fetch water. Not sure exactly what that meant.
Saqib: So you mean the train driver had to leave?
Farhat: Yes the train driver. The train was stopped while the engineer went to get water. But he came back quickly. But we saw the Hindu mobs trying to get us being held at bay. The next station was Bhiyaas. All the Hindu people had gathered at the Bhiyaas Station.
Saqib: Did you hear they were gathering there?
Farhat: We saw for ourselves. We could see them from a distance coming by the truckload. We knew they were coming to kill us at the station. We watched them come. When we got to Bhiyaas, they took our train driver away. Some Hindu railworker said that the train had to stay parked at that station because up ahead, the track was damaged. But it was a ruse to keep the train at the station so they could kill us Muslims. Later someone who worked for the rail system — I’m not sure if they were Muslim or not — told us the truth that there was no problem with the track and the train should leave the station to end the massacre of Muslim passengers.
Saqib: Hang on. Did your train stop at Bhiyaas?
Farhat: Yes, it was stopped there for a long time so they had time to kill as many of us as possible.
Saqib: So the people that said the tracks were damaged, were they working together with the Hindu mob?
Farhat: Yes they were working together.
Saqib: So that they could massacre the Muslim passengers?
Farhat: Yes, to let the massacre happen. The mobs took two of the train compartments away. They had men, women and children in them.
Saqib: How many compartments were there all together?
Farhat: I have no clue how many there were all together. We were too young to pay attention to that. After they took the two compartments, there were three compartments left over at the platform. The mob set fire to the compartment next to ours. We could feel the flames they set underneath our own compartment.
Saqib: So they took the two compartments? How? What happened to them?
Farhat: Well, they disconnected the compartments and took two away, back towards India. The people in them were alive. But we have no clue what happened to them. The mobs probably killed as many of them as they could.
Saqib: What about the rest of the train?
Farhat: The mobs attacked the other compartments. We could hear their desperate screams for help. It was brutal. In our compartment people were crying out to Allah begging for deliverance. We could hear people praying the Kalma [Islamic creed]. Others were crying out “Oh Ali!” because they were Shia. Then, finally, after what seemed like forever, our train got a message saying that it could move. There was no problem with the track. And the train should leave to save the remaining Muslims from being massacred.
Saqib: You were in the train. Could you see the crowds outside?
Farhat: No, we couldn’t see the crowds. We could only hear them. No, we could not see them. It was total darkness in the train because the suitcases were covering all the windows. We could only hear the voices and the screams.
Saqib: Were the screams from close by?
Farhat: Yes! They were so close. We were stopped in a jungle and the mobs were all around.
Saqib: On the platform?
Farhat: Well, we were stopped short of the platform in a jungle area
Saqib: Was there fire?
Farhat: They set fire to the compartment next to us and we could feel the fire underneath our own compartment. We told my mother about the fire coming up. She told us to recite the Kalma [Islamic creed] and just hope for the best. Then I guess someone must have put the fire out, I’m not sure.
Saqib: Was the fire near your train compartment?
Farhat: Yes. We could feel the heat through the train’s floor, like there was a fire underneath the train.
Saqib: Was there smoke?
Farhat: No, we didn’t get any smoke inside the train because all the windows were blocked by our suitcases. We couldn’t see anything outside.
Saqib: You could only hear the sounds and the heat?
Farhat: Yes, just the sounds and the heat. We could hear the sound of the fighting, the guns…
Saqib: Was the sound coming from nearby or far away?
Farhat: Yes, from right outside our train.
Saqib: Didn’t anyone take a peek out the window?
Farhat: Well finally when they connected us back to the engine compartment, I guess the Indian Army must have shown up. So they shot flares into the sky to illuminate the jungle area. That’s when we saw lots of bodies lying around the train. Some were already dead. Some were dying. Some were barely moving. Some were sitting their dazed. And I could see the Hindu mob.
Saqib: So who were the dead and dying people?
Farhat: All Muslims… people from our train, the other compartments.
Saqib: So you mean they took people out of your train and killed them?
Farhat: Well we didn’t see. But of course. They must have taken the people out of the other compartments and killed them. And people that escaped and were running away, they must have caught them and killed them too. But we didn’t see it ourselves. We just heard the noises.
Saqib: And you saw the bodies?
Farhat: Yes. We saw the bodies. We saw all the bodies…Our uncle [my mother’s sister’s husband] was the chief engineer on the other side. He was in charge of putting people up in homes… When our train finally started moving out of the Bhiyaas station and we let the fresh air in, we all breathed a deep sigh of relief and thanked Allah that the next stop was safely in Muslim territory. When we got to that station (I forget the name of it), there was a train going the opposite direction stopped on the track right next to ours.
Saqib: You mean it was going towards India from Pakistan?
Farhat: Yes, it was going towards India and was full of Hindus and Sikhs. Anyway, there was on of our Muslim mob at that station. They were very fierce Punjabi folks. They were armed with sticks and other weapons. Even the kids were holding spears. This mob told my mother: “Listen lady, they killed our people. So now we are going to attack their whole train”
Saqib: So this was a Muslim mob now threatening to attack the Hindu train?
Farhat: Yes, the Muslim mob said that we won’t let these Hindus get to India because they killed our Muslims. We saw the Muslim mobs running towards the India-bound train to attack it.
Saqib: Adults, children, they were all were saying that?
Farhat: Yes. At that station, my father was very thirsty from the heat. He kept crying out that he was on the verge of dying from thirst. So they let him off the train. He found some rain-water puddles.
Saqib: You mean on the ground?
Farhat: Yes. On the ground. The kind of puddles that accumulate in the mud after a monsoon rain
Saqib: Dirty water?
Farhat: Yes dirty water. He drank 2 glasses of that filthy water. But thanks to Allah, he didn’t get sick.
Saqib: Let me ask you a question: When you were on the crowded train, where did you go to the bathroom?
Farhat: We told our mom we had to go. She said just do it standing right there, in your clothes. There was no space to even move. So what else could we do? We did it in our clothes.
Saqib: Ok, now let’s get back to the station. There was a Muslim mob there. They promised to protect you right?
Farhat: Yes. Not only did they say they would protect us, They said they would avenge us by killing Hindus. And they said they wanted to show us the dead Hindus. So then they took the train backwards.
Saqib: You mean back towards India?
Farhat: Yes! Towards India, but only a short way. They showed us where they had attacked the India-bound train. And they showed us all the people they had killed.
Saqib: So you saw Hindu bodies?
Farhat: Yes. We saw the Hindu bodies just lying there.
Saqib: When you saw that what was going through your mind? What did you think about what you were witnessing?
Farhat: I didn’t really think anything. We were numb. We were just terrified for our own lives. That’s it. Maybe my parents had some feelings about it. But we didn’t. Then they turned the train back around and we headed to the Lahore station [in Pakistan]. We saw corpses that were being unloaded from the train and placed in shrouds onto the tracks. Our uncle [my mother’s sister’s husband] came to the the train station to find his family. He was uncovering the faces of the dead bodies to see if any of his family members were among them. Because newspapers had already alerted Pakistanis that the September 22 train (or whatever September date it was) had been attacked and only two of the compartments made it out of India. We were in those two compartments.
Saqib: So your uncle was looking for your dead bodies?
Farhat: Yes, he was looking to see if any of his family were among the dead. Because he had heard everyone in the train had been killed. So he had probably assumed we were dead. We saw him from far away looking for our bodies. So we shouted out “Uncle Dear!” He was delighted and asked “Are you guys Ok?”. We answered “We survived!”. So he got us off the train. And he took us to his house. He gave us food and drink. And we all took showers. He gave us clothes. We didn’t have any of our own clothes. And he even put us up in a big villa. He said this was our new house.
Saqib: Whose villa was it?
Farhat: It was the home of some Hindu family who had left for India. Their empty homes were being giving to Muslims arriving from India. And it happened to us too. Muslims had to flee our homes in India while the bread was still on the hot stove. Who knows what happened to our old home [in Delhi]?
Saqib: So it happened on both sides?
Farhat: Yes, of course. On both sides. Anyway, we spent one night in that villa in Lahore. But we couldn’t sleep. There was an India-Pakistan border post nearby. It was named Sarhat. That night we heard mobs coming and fighting and killing at the border post. And cries of “Allah is Great!”
Saqib: So you heard fighting noises?
Farhat: Yes. We were worried that Lahore was so close to the Indian border that Hindu mobs could easily cross over and kill us.
Saqib: Did you hear any gunfire?
Farhat: Yes and distressed cries of “Allah is Great!”. After that night, we decided that we didn’t want to stay in Lahore. It was too close to India. We asked to be sent as far away from India as possible, to Karachi.
Saqib: Because Karachi is away from India?
Farhat: Yes Karachi is much further away from India. We were worried that if we stayed in Lahore the Hindu mobs could easily cross the border and get us. So that fear made us leave Lahore and come to Karachi.
Saqib: By train?
Farhat: Yes, we went to Karachi by train.
Saqib: And there you spent the rest of your life, got married, etc?
Farhat: Yes I got married in 1949 [two years later] in Karachi.
Saqib: Ok. Thank you so much Grandma. Shake my hand.
Farhat: Don’t mention it my dear.
ثاقب: تو نانی بتائیں جب پارٹیشن کا وقت آیا تو مطلب۔۔۔ آپ کہانی بتائیں شروع سے کہ مطلب کیا آپ نے دیکھا؟ کیا سنا؟ کیوں چیزیں ہوئیں؟ جن کو کوئی چیز نہیں معلوم پارٹیشن کے بارے میں آپ ان کو بتائیں۔
فرحت: پھر وہاں۔۔۔ ہم تو خیر چھوٹے تھے، لڑکیاں تھیں، ہم تو خیر باہر نکلتے نہیں تھے۔ ہمیں آرڈر نہیں تھا باہر نکلنے کا، کبھی نکلتے نہیں تھے باہر گھر سے۔ وہاں پہ بیٹیوں کو۔۔۔ ہماری امی کہیں نہیں لے کے جاتی تھی جیسے مرنے میں، کسی کے انتقال پہ۔۔۔ تو ہماری امی ہمیں نہیں لے کے جاتی تھیں۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: خود اکیلی جاتی تھیں تو وہاں لڑکیوں کو نہیں لے کے جاتے تھے۔
ثاقب: کیوں؟ حالات خراب تھے یا بس؟
فرحت: نہیں حالات خراب کی وجہ سے بھی۔ کہ راستے میں گڑ بڑ نہ ہو جائے۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: بس ہم رہتے رہے۔ آج اس محلے میں حملہ آور آئے، کل اس محلے میں حملہ آور۔ پھر ایک دن کہا گیا آج اس محلے میں حملہ آور آئے، ہم جس محلے میں رہتے تھے۔
ثاقب: اچھا۔ حملے کون کر رہے تھے؟
فرحت: انڈیا والے۔ وہ یہ سب ہندو لوگ تھے سارے۔۔۔ تو سارے ہندو تھےجو ہمارے قریب رہتے تھے وہ سب نکل آئے سارے کے سارے۔
ثاقب: وہ آپ کے جو ہمسائے ؟
فرحت: ہمسائے (نی برز) تھے جو ہمارے وہ بھی ہمارے خلاف ہو گئے سب کے سب۔
ثاقب: اچھا. مطلب فوج نہیں، پولیس نہیں؟
فرحت: نہیں، فوج نہیں، پولیس نہیں تھی۔ ہم نے پولیس نہیں دیکھی، نہ ہم نے فوج دیکھی تھی، وہ ہم نے راستے میں دیکھی تھی۔ یہاں نہیں دیکھی۔۔۔ پھر ہمیں۔۔۔ ہم رات کو سوتے تھے، گرمیاں تھیں، چھت پے سوتے تھے تو رات بھر ہمارے چھت کے اوپر سے گولیاں اس مکان میں لگ رہی ہیں، اس مکان میں جا رہی ہیں، ہمارے اوپر سے جاتی تھیں پھر ہم۔۔۔ ہماری امی ہم سب، ہمارے چھوٹے بہن بھائیوں کو لے کر برابر میں گھر تھا نیچے، وہاں ساری عورتیں محلے کی جمع ہوجاتی تھیں۔ اور بڑا ہمارے گیٹ سے بڑے بڑے دروازے تھے اس کے۔ اس پہ مرد کھڑے ہوجاتے تھے ڈنڈے ونڈے لے کر اس پستولیں لے کے اور ہم لوگ وہاں بیٹھ کے بس اللہ سے دعا مانگتے تھے، سجدے میں پڑے رہتے تھے کہ ہمیں اللہ بچا لے۔ ہمارے بچوں کو، ہم کو سب کو بچا لے۔ صبح ہوتی تھی پھر ہم اوپر جاتے تھے، دن میں۔ رات کو شروع کرتے تھے یہ لوگ۔ دن میں تو نہیں کرتے تھے۔ خیر ہمارا نمبر آ گیا تھا پھر۔۔۔
ثاقب: حملے رات کو؟
فرحت: رات کو حملہ کرتے تھے وہ، دن میں نہیں آتے تھے۔ وہ رات کو حملے کرتے تھے۔ بس پھر وہ ٹرک۔۔۔ ہمارے والد کو کہا آپ کا ٹائم ہے جانے کا۔۔۔
ثاقب: کہاں جانے کا؟
فرحت: وہیں پہ لال قلعہ، وہاں پہ بنایا ہوا تھا ہمارے لیے۔۔۔
ثاقب: اب بتائیں، تھوڑا جن کو نہیں پتہ لال قلعہ تھوڑا۔۔۔
فرحت: لال قلعہ وہاں بڑا خوبصورت بنا ہوا تھا۔۔۔ قلعہ تھا وہ۔۔۔ اس میں نماز پڑھتی تھی۔ مسجد میں نماز پڑھتی تھی۔
ثاقب: اچھا مسجد بھی وہاں تھی؟
فرحت: ہاں مسجد بھی تھی، وہاں پہ پرانے لوگوں کی۔۔۔ وہاں پہ ان کے سارے تھے ۔۔۔
ثاقب: پرانی جگہ تھی؟
فرحت: پرانی تھی، شاہجہان کے زمانے کی۔ اتنے پرانے پرانے تھے وہاں پہ خوبصورت بنے ہوئے۔۔۔
ثاقب: جامعہ مسجد تھی وہاں پہ؟
فرحت: نہیں جامعہ مسجد تو شہر میں تھی یہ تو شہر سے دور تھا ذرا۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: تو وہاں جاکر ہمیں ٹرک والوں نے اتار دیا، ہم نے سامان تھوڑا تھوڑا لیا تھا۔
ثاقب: تو آپ نے جو گھر چھوڑا.
فرحت: گھر چھوڑا تو پھر ہماری امی نے زیور اور ہمارے کچھ پیسے روپے تھے جو ہم لے کے جا سکتے تھے۔ وہ انہوں نے، امی نے میری کمر پر باندھ دیا تھا۔
ثاقب: کمر پر؟
فرحت: ہاں کمر پہ یہاں باندھ دیا تھا۔
ثاقب: کیوں؟
فرحت: کیونکہ میری امی کے ہاں بچہ ہونے والا تھا۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: تو وہ اپنے پیٹ پہ نہیں باندھ سکتی تھیں تو انہوں نے میرے پیٹ پر باندھ دیا۔
ثاقب: مطلب پیٹ؟ کپڑے کے اندر یا کپڑے کے باہر؟
فرحت: نہیں کپڑے میں، تھیلی میں بھر کے۔۔۔ وہ تھیلی میری کمر پہ باندھ دی تھی۔
ثاقب: اچھا چھپانے کے لئے؟
فرحت: چھپانے کے لئے، اوپر قمیض پہن لی تھی کی کہیں ہمیں بھوکا نہ مرنا پڑے، کہیں پیسے نہ ہوں ہمارے پاس تو، ہم کہاں سے کھائیں گے؟ آگے کتنے دن وہاں پہ ہمیں رہنا پڑے گا؟ یہ ہمیں پتا نہیں تھا.
ثاقب: آپ نےجب اپنا گھر چھوڑا تو آپ نے کیا اچانک تھوڑا؟
فرحت: اچانک اچانک چھوڑا۔ سب نے کہا آج حملہ ہونے والا ہے۔ ہم سب ایک۔۔۔ گلیوں میں سے چھپ چھپ کے ہماری نانی کا گھر تھا۔
ثاقب: مطلب آپ نے جو سارا سامان پیک کیا.
فرحت: سامان کچھ نہیں تھا کوئی خاص ہمارے پاس۔ بس ہاتھ میں جو تھا وہ تھا اور کپڑے تھے صندوق تھا، اس میں میری امی نے میرے لیے جہیز کے تھوڑے سارے کپڑے رکھ لیے تھے اور چاندی کا سامان تھا بہت۔ میری امی نے جہیز کے لیے رکھے تھے وہ سب اس میں ڈال کےوہ صندوق ہم نے ٹرک میں رکھ دیا تھا۔
ثاقب: تو پوری فیملی کے لئے ایک صندوق؟
فرحت: بس ایک صندوق اور بھی کھانے پینے کا سامان رکھ لیا تھا آٹا، چاول، دال، وغیرہ۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: پر ویسے وہاں پے روٹی بانٹنے آتے تھے ایک ایک روٹی چاول ایک ایک آدمی کے لئے دیتے تھے۔
ثاقب: اب آپ چھوڑ کے گئے اپنا گھر، ایک ٹرک آیا تھا آپ کو لینے ٹرک آپ کی فیملی لے کر گیا۔
فرحت: اور بھی بہت سی فیملیز اس میں بھر کر گیا تھا ٹرک پورا۔ تو ہم سب کو وہاں جا کر انھوں نے لال قلعے میں اتار دیا تھا۔ پھر وہاں ہم لوگ پردے لگا لگا کر بیٹھے کیونکہ ادھر بھی آدمی تھے سارے۔ وہیں ہم نے کھانا پکایا، چولہا لے کر گئی تھے۔
ثاقب: باہر یا اندر؟
فرحت: بالکل میدان میں.
ثاقب: اچھا۔
فرحت: اندر تو جگہ نہیں تھی۔
ثاقب: تو دھوپ؟
فرحت: ہاں کچھ بھی آئے دن رات وہیں پہ بیٹھے ہوئے تھے ہم، باہر بیٹھے ہوئے تھے ہم دھوپ میں۔ کسی نے اپنی چادر تان لی تھی تو اس کے نیچے بیٹھے تھے۔
ثاقب: تو اگست کا وقت تھا نہ ؟
فرحت: ہاں۔
ثاقب: تو گرمی ہوگی؟
فرحت: گرمی تھی بس پھر ہمارا نمبر آگیا.
ثاقب: تو آپ وہاں… آپ بتائیں کتنے دن آپ لوگ لال قلعے میں رہے؟
فرحت: تین چار دن رہے.
ثاقب: ریفیوجیز(Refugees) کے طور پہ؟
فرحت: ریفیوجیز کے طور پر ہم وہاں رہے.
ثاقب: اور وہاں لوگ آپ کو کھانا؟
فرحت: کھانا بالکل روکھا دے دیتے، ایک ایک مٹھی چاول ایک ایک آدمی کا حصہ۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: وہ ہمیں دے کے جاتے تھے جتنے آدمی تھے اس کے حساب سے. 8 مٹھیاں۔
ثاقب: اچھا. بس چاول؟
فرحت: بس چاول. پھر ہم پکا لیا کرتے تھے چولہے لے کر گئے تھے ہم سب۔ کیوں کہ ہمارے بہن بھائی چھوٹے چھوٹے تھے تو ہماری امی نے کہا کہ میں کہاں کھانا کھلاؤں گی انہیں بھوکے رہے تو ہمارے پاس نوکر بھی تھا وہ بھی ہمارے ساتھ چلا آیا تھا۔ بس پھر وہ وہیں پہ رہ لیا تھا۔
ثاقب: تو بتائیں، آپ اب دو تین دن لال قلعے میں رہیں۔ تو؟
فرحت: وہاں پہ بھی ہم نے بندوقوں کی آوازیں آتی تھیں رات بھر فائرنگ ہوتی تھی۔ ہم سمجھے یہاں بھی حملہ کر رہے ہیں۔ اندر آ رہے تھے۔ مگر یہاں بڑی پولیس وغیرہ لگی ہوئی تھی۔ اندر نہیں آ سکتے تھے۔ وہ بہت بڑا گیٹ تھا۔ وہاں بھی ہم ڈرتے ہیں رہتے تھے۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: بس نمبر وار سے بھیج رہے تھے پاکستان۔ پھر ہمارا نمبر ایک دن آگیا۔ بھئی آپ کو جانا ہے۔ آپ کی ٹرک آرہی ہے۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: تو پھر بڑے خوش ہوئے چلو جا رہے ہیں۔ بس پھر وہ ٹرک آگئی۔ جو ہمارے ساتھی تھے، سب لوگوں نے اپنا سامان جلدی جلدی اس میں ڈالا، بچوں کو چڑھایا، سب کو چڑھایا۔ ٹرک میں چڑھایا کہ بھئی ہم لوگ رہ نہ جائیں۔ اب ہم ٹائم پے چلے جائیں۔
ثاقب: اچھا۔ پوری فیملی آپ کی ایک ٹرک میں؟
فرحت: ایک ٹرک میں تھی. اور بھی لوگ تھے بہت سارے ایک ٹرک میں۔
ثاقب: کھڑے کھڑے ٹرک میں؟ ٹرک کے پیچھے کمپارٹمنٹ میں؟
فرحت: نہیں، ٹرک کھلی ہوئی تھی، جیسے فوجی ٹرک نہیں ہوتی، ویسے کھلی ہوئی تھی۔
ثاقب: اس کی کوئی چھت نہیں تھی؟
فرحت: نہیں چھت نہیں تھی اسکے اوپر لوہے کے وہ لگے ہوئے تھے مگر چھت انہوں نے اتار دی تھی۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: بس پھر ہم اسٹیشن پہ گئے۔
ثاقب: ٹرین اسٹیشن؟
فرحت: ٹرین اسٹیشن گئے، پتا نہیں کون سا اسٹیشن تھا۔ اندھیرا تھا وہاں پہ۔ نہ بتی، نہ کچھ۔ وہاں پلیٹ فارم پہ ہمیں اتار دیا؟
ثاقب: کس پہ اتارا؟
فرحت: پلیٹ فارم جو ہوتا ہے جہاں ٹرین آکے کھڑی ہوتی ہے۔
ثاقب: اچھا، صحیح صحیح۔
فرحت: اب وہاں ٹرین تو کھڑی تھی، پر لوگ بے تحاشہ تھے۔ جلدی جلدی چڑھ رہے تھے کہ ہم نہ رہ جائیں وہاں پہ۔ وہاں رات کو کوئی رہ جاتا تو اس کو قتل کر دیتے تھے وہاں۔
ثاقب: ٹھیک وہاں بھی لوگ مطلب؟
فرحت: ہاں وہاں بھی آ گئے تھے لوگ وہاں پہ بھی قتل کر دیا کرتے تھے۔ وہاں سے ٹرک میں پھر ہم سب بیٹھ گئے تو ٹرین میں بیٹھے۔
ثاقب: ٹرین میں جگہ تھی؟
فرحت: ٹرین جگہ نہیں تھی۔ بڑی مشکل سے ملی تھی بس ایک صندوق گھسایا، بچوں کو کھڑکیوں سے گھسایا، باتھ روم بھی بند ہوگئے تھے سب۔ باتھ روم میں بھی جگہ نہیں تھی۔
ثاقب: تو باتھ روم میں بھی بٹھایا ہوا تھا؟
فرحت: ہاں کہیں جگہ ہی نہیں تھی تو کہاں بٹھاتے۔ تو بس پھر۔۔۔
ثاقب: اور گرمی؟ ٹرین میں اے سی بھی؟
فرحت: ٹرین میں گرمی… اف۔۔۔ نہیں ٹرین میں کچھ بھی نہیں تھا۔ کھڑکیاں کھلی ہوئی تھیں اس میں سے تھوڑی ہوا آرہی تھی۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: ہاں کھڑکیاں کھلی ہوئی تھی بس پھر گاڑی چلی تو ہم نے شکر منایا کہ یہاں سے تو نکل گئے ہم۔ تو پھر سارن پور تھا راستے میں۔ سارن پور سے آگے جاکے ٹرین رک گئی۔ ہم تو ڈرتے تھے، ٹرین رکی تو کوئی ہمیں مار دے گا مگر جب ٹرین کی وہاں پے۔
ثاقب: اسٹیشن پہ؟
فرحت: اسٹیشن پہ تو وہاں کے لوگ مسلمان تھے۔
ثاقب: تو آپ کی ٹرین پاکستان کی طرف جا رہا تھا؟
فرحت: ہاں پاکستان کی طرف جا رہا تھا.
ثاقب: تو پاکستان سے ٹرین؟
فرحت: واپس آنے کی ابھی ہم نے نہیں دیکھی تھی ہم تو ابھی شروع کر رہے تھے۔
ثاقب: تو مسلمان انڈیا کو چھوڑ کے پاکستان جا رہے تھے اور ہندو اور سکھ پاکستان کو چھوڑ کر انڈیا آرہے تھے؟
فرحت: انڈیا آرہے تھے بس۔
ثاقب: آپ بتائیں آپ کے گھر کیا کا کیا ہوا جو آپ نے گھر چھوڑا؟
فرحت: ہمیں اس کے تھوڑے پیسے مل گئے تھے.
ثاقب: اچھا؟
فرحت: ہمارے والد نے تھوڑی کوشش کرکے تو تھوڑے پیسے مل گئے تھے۔
ثاقب: کہاں سے؟ آپ کو پتا ہے؟
فرحت: وہ انڈیا والوں کو اپنے آفس کی طرف سے انہوں نے خط لکھا تھا تو ان کو تھوڑے پیسے مل گئے تھے۔
ثاقب: گورنمنٹ سے؟
فرحت: گورنمنٹ نے دیے تھے.
ثاقب: اچھا.
فرحت: راستے میں اتنی سخت گرمی تھی۔ بہاولپور میں سارے مسلمان تھے، انہوں نے ہمیں کھانا کھلایا۔
ثاقب: بہاولپور میں؟
فرحت: بہاولپور میں ہم سب کو کہا کھانا کھائیں. اب آپ آگے جا رہے ہیں، تو آگے آپ کو خطرہ ہے۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: آگے خطرہ ہے تو آگے اپنی کھڑکیوں پر صندوق لگا دیں، کھڑکیاں اپنی بند کر دیں، تو ہم سوچیں ہم زندہ کیسے رہیں گے کھڑکیاں بند کر دیں تو۔ کوئی کوئی کھڑکی آدھی کھلی تھی، کوئی کھڑکی تھوڑی کھلی تھی۔ تو پھر آگے جا کر ڈر لگا تو ہم نے کھڑکیاں بند کر دی۔ کچھ لوگوں نے صندوق لگا دیے کچھ چیزیں لگادیں تا کہ اندر کوئی نہ آ سکے۔
ثاقب: یہ کون سے اسٹیشن پہ تھا؟
فرحت: یہ تو بہاولپور تھا، انہوں نے ہمیں کہہ دیا تھا کہ آگے خطرہ ہے۔ تو آگے جب گئے۔۔۔ تو آگے آگیا سرہند کا۔
ثاقب: سرہند کا اسٹیشن؟
فرحت: اسٹیشن آگیا تو ہمارے آج بھی تو جھگڑا تھا وہ تو دوسرا پلیٹ فارم تھا۔ وہاں ہم نے دیکھا تھا چھوٹے لڑکے، بڑے جوان مرد ڈنڈے لئے ہوئے پستولیں لئے ہوئے۔ پولیس والے بھی۔۔۔ اور وہ چھرے لگے ہوئے اس میں۔
ثاقب: اور ہندو لوگ کھڑے ہوئے تھے؟
فرحت: ہندو لوگ کھڑے تھے سب ڈنڈوں کے ساتھ.
ثاقب: ڈنڈوں کے ساتھ؟ اور وہ سب کہہ رہے تھے نہیں جانے دو۔ وہ مارنے کے لئے آنا چاہتے تھے وہ پھلانگ کر آگے آنا چاہتے تھے۔ پر گرل لگی ہوئی وہاں۔
ثاقب: اچھا۔ وہ کہہ رہے تھے وہ جنگلے کو پھلانگ کے آنا چاہتے تھے۔
فرحت: آنا چاہتے تھے پھر وہاں کی پولیس تھی یا پتا نہیں کون تھی. اس نے انہیں روکا ہم نے دیکھا تو وہ روک رہے تھے۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: خیر رک گئے او یہاں انہوں نے کیا کیا، پتا نہیں ہندو تھے کون، انہوں نے کہہ دیا انجن پانی لینے چلا گیا۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: بھاپ نہیں کہتے تھے اس زمانے میں پانی کہتے تھے۔ کہ پانی لینے چلا گیا انجن۔
ثاقب: تو مطلب انجنیئر کی گاڑی؟
فرحت: نہیں گاڑی چلی نہیں تھی. گاڑی کھڑی ہوئی تھی.
ثاقب: انجنئیر مطلب ڈرائیور؟
فرحت: مگر خیر وہ آ گیا تھا جلدی۔ مگر پھر وہ جو ہندو تھے سارے لوگ۔ آگے تھا بیاس۔ بیاس اسٹیشن پہ سارے ہندو لوگ جمع ہو گئے۔
ثاقب: آپ نے سنا کہ وہ؟
فرحت: ہم نے خود دیکھا وہ ٹرک میں بھر بھر کہ آ رہے تھے، دکھائی دے رہے تھے تھوڑی دور تک وہ۔ ہم نے کہا یہ سارے ٹرک بھر بھر کے ادھر آ رہے ہیں اس والے اسٹیشن ہمیں مارنے کے لیے۔ ہم دیکھ رہے تھے۔ بیاس میں آ رہے تھے۔ تو پھر کیا تھا۔ یہاں انجن کو نکال کے لے گئے۔ وہاں کسی نے خبر دی ہندوؤں نے کہ وہاں لائن خراب ہے پٹری خراب ہے۔ اب یہ انجن مت آؤ۔ انجن کو آگے مت آؤ ابھی۔ کیونکہ وہ مار رہے تھے مسلمانوں کو۔ انہوں نے جب مارلیا مسلمانوں کو۔ پھر کہہ رہے تھے، کوئی تھا وہاں پہ انجن کے پاس اس نے کہا بالکل پٹریاں ٹھیک ہیں۔ کوئی خرابی نہیں ہے تم انجن بھیج دو۔ یہاں مسلمانوں کا قتل عام ہورہا ہے۔
ثاقب: تو۔۔۔ ایک سیکنڈ۔۔۔ بیاس میں آپ کی ٹرین رکی ہوئی تھی؟
فرحت: ہاں بہت دیر رکی رہی وہاں پہ۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: وہ آرام سے مار رہے تھے۔
ثاقب: کسی نے وہاں ٹرین رکوائی تھی کہ وہ ہندوؤں کے ساتھ ملے ہوئے تھے؟
فرحت: ہاں وہ ملے ہوئے تھے.
ثاقب: تاکہ آپ لوگوں کا سب کا قتل عام ہو جائے۔
فرحت: قتل عام ہو جائے۔ اس میں سے دو ڈبے تو بالکل نکال کے ہی لے گئے تھے۔ عورتیں بچے مر تھے جن میں۔
ثاقب: مطلب ٹرین کے؟
فرحت: ٹرین کے.
ثاقب: کتنے ڈبے تھے کل؟
فرحت: کل پتہ نہیں کتنے ڈبے تھے. ہمیں تو یاد نہیں، ہم تو اتنے سمجھدار نہیں تھے اس زمانے میں ذرا۔ تو پتہ نہیں کتنے تھے۔ دو تو وہ لے گئے تھے۔ ہمارے بس تین ڈبے بچے تھے۔ پوری ٹرین میں ہمارے تین ڈبے۔۔۔ ہمارے برابر والے ڈبے میں آگ لگا دی تھی انہوں نے۔
ثاقب: اچھا.
فرحت: تو اب ہمارے نیچے سے آگ۔۔
ثاقب: تو دو ڈبے کیا وہ کاٹ کے لے گئے؟
فرحت: ہاں وہ انہوں نے جیسے الگ کرلیتے ہیں گاڑیوں کے، ایسے لے گئے زندہ وہ۔
ثاقب: پھر کیا ہوا ان کا۔
فرحت: اب پتا نہیں اپنے لے گئے انڈیا۔۔۔ کیا کیا۔۔ کیا نہیں۔۔۔ ان کا مارا یا کیا کیا ان کا۔ لے گئے ان کو کاٹ کے کہ ہمیں کیا خبر ان کو مار دیا یا پھر کیا۔
ثاقب: اچھا تو باقی جو ٹرین تھی؟
فرحت: باقی تو ان کو اتنا مارا، لوگوں کی چیخیں پکاریں آ رہی تھی۔ کوئی کلمہ پڑھ رہا تھا، کوئی یاعلی پڑھ رہا تھا۔ شیعہ بھی تھے، ہم بھی، سب بھی۔ خیر پھر وہ انجن کسی نے کہا کہ کوئی خرابی نہیں ہے لائن میں انجن کو بھیج دو، یہاں مسلمانوں کا قتل عام ہورہا ہے۔
ثاقب: آپ کی جو ٹرین تھی آپ کا جو ڈبہ اس میں سے دکھائی دے رہا تھا باہر جو لوگ کھڑے تھے؟
فرحت: نہیں اندھیرا تھا بالکل کیوں کہ صندوقیں لگی ہوئی تھیں۔ بلکل اندھیرا تھا ہمیں نہیں پتہ کہاں مار رہے ہیں، کہاں کر رہے تھے۔ ہمیں آوازیں آ رہی تھیں۔
ثاقب: آوازیں قریب کی تھیں؟
فرحت: بالکل قریب کی تھی قریب تھا ہمارے جنگل. ہماری ٹرین وہیں کھڑی تھی.
ثاقب: پلیٹ فارم پہ؟
فرحت: ہاں، پلیٹ فارم می تھی، پلیٹ فارم سے پہلے ہو گئی تھی۔
ثاقب: اچھا۔
فرحت: وہاں تو جنگل ہی جنگل تھا بالکل سارا جنگل بالکل قریب تھا دونوں نے مار کر.
ثاقب: تو مطلب آگ لگائی؟
فرحت: آگ ہمارے برابر ڈبے میں لگائی. میں جمع ہوتا ہے وہاں پر جنگلوں میں
ثاقب: ہاں زمین پر؟
فرحت: زمین میں جنگلوں میں جو پانی جمع ہو جاتا ہے۔
ثاقب: گندا پانی؟
فرحت: ہاں گندا پانی. وہ ان کو 2 گلاس انہوں نے برکہا پیا.
ثاقب: اچھا.
فرحت: پھر بھی ان کو کچھ نہیں ہوا اللہ کا شکر ہے۔
ثاقب: اور اب آپ جب ٹرین میں تھی جب کو مطلب باتھ روم آ رہا تھا۔۔
فرحت: تو ہماری امی کہتی ہی کردو اسی میں۔ اب جگہ کہاں ہے کدھر ہے ہلنے کو جگہ نہیں ہے تو اب ہم کدھر جائیں۔
ثاقب: اچھا
فرحت: ہاں بس یہیں کردو اسی نے کرو جو بھی کرنا ہے۔ اسی میں بس جب ہم وہاں پر گئے تو لاشیں نکالی جا رہی تھی۔
ثاقب: نہیں جو پھر آپ مسلمان مطلب آپ سٹیشن آئے ؟ جہاں پر آپ مسلمان لوگ کہہ رہے تھے کہ ہم بس آپ کو پروٹیکٹ کریں گے؟
ثاقب: ہاں ہم آپ کو پروٹیکٹ کریں گے اور ان کو ماریں گے اور ہم دکھ آپ کو دکھائیں گے بھی جاکر قوم ارے پھر ان کو مار کے ہماری ٹرین واپس لے گئے وہ۔
ثاقب: واپس انڈیا کی طرف؟
فرحت: ہاں انڈیا کی طرف جہاں پر ہم کو دکھایا کہ کیسے ہم نے ہندو کی گاڑی کو ختم کیا ہے یہ دیکھیں آپ مرے پڑے ہیں سارے۔
ثاقب: تو آپ نے دیکھی ہندو لاشیں؟
فرحت: ہاں ہاں پڑی ہوئی تھیں۔ ہم دیکھیں ہم نے۔
ثاقب: تو آپ کے دماغ میں کیا ایا آپ نے دیکھ کر کیا سوچا؟
فرحت: پتا نہیں اس وقت ہمیں احساس ہی نہیں تھا کچھ بھی بس ہم ڈرتے ڈرتے ڈرتے تھے کچھ بھی نہیں ہمارے امی ابا کے ساتھ تھا بس ڈر تھا کہ پتا نہیں زندہ جائیں گے کہ نہیں بس پھر واپس گاڑی لے آئے لاہور کے اسٹیشن پر وہاں پٹریوں پر سارے جنازے رکھے جارہے تھے نکال نکال کر سب کو گاڑیوں میں سے۔
ثاقب: جو گاڑیوں میں سے بھی مرے ہوئے تھے؟
فرحت: ہاں ان سب کو گاڑیوں میں سے نکال نکال کر رکھے جارہے تھے تو ہمارے حالوں سب کو دیکھ رہے تھے کپڑے ہٹا ہٹا کر کے ان میں ہمارا تو کوئی نہیں ہے کیونکہ وہاں اخبار میں آ گیا تھا کہ کے یہ ب 22 ستمبر کی گاڑی پتا نہیں کون سی ستمبر کی گاڑی ٹرین کاٹ دی ہے بس دو ڈبے بچے ہیں تو اس میں ہم تھے۔
ثاقب: اچھا تو آپ ان دو ڈبوں میں تھے؟
فرحت: جی ان دو ڈبوں میں تھے ہم بس پھر.
ثاقب: تو وہ آپ کی لاشیں ڈھونڈ رہے تھے؟
فرحت: جی وہ اس میں ڈھونڈ رہے تھے کہ اس میں کوئی ہمارا تو نہیں ہیں مرا کیوں کہ خبر آ گئی تھی پوری ٹرینگ وہ ختم کر دیا وہ سمجھے ہوں گے کہ ختم ہوگئے ہیں ہم بھی ہیں پھر ہم نے ان کو دور سے دیکھا کہ وہ اس طرح دیکھ رہے ہیں سب کو پھر ہم نے ان کو آواز دی کہ حال و جان انہوں نے پوچھا یہ بتاؤ کہ تم لوگ کیسے ہو ٹھیک ہو ہم نے کہا ہم ٹھیک ہے زندہ ہیں انہوں نے پوچھا کہ سب زندہ ہو ہم نے کہا جی ہم سب زندہ ہیں پھر وہ ہمیں اتار کر اپنے گھر لے گئے کھانا کھلایا نہلایا دھلایا کپڑے دیے ہمارے پاس تو کپڑے بھی نہیں تھے کوئی تو پھر انہوں نے کپڑے دیے اور ایک بہت بڑی کوٹھی میں ٹھہرایا کہ یہ اب آپ لے لیں ہم نے کہا ہمیں کوئی کوٹھی نہیں چاہیے.
ثاقب: کس کی کوٹھی تھی؟
فرحت: ہندو چھوڑ کر گئے تھے وہاں مسلمانوں کو بسا رہے تھے. ہماری امی ایک چولھے پر روٹی پکا رہی تھی اور سالن سب سب چھوڑ چھاڑ کے بعد گئے.
ثاقب: دونوں سائیڈ پر؟
فرحت: جی دونوں طرف ہی.تو ادھر کا نہیں پتا ہمیں خیر۔ ہم ایک رات وہاں لاہور میں سوئے۔
ثاقب: کوٹھی میں ؟
فرحت: جی کوٹھی میں سوئے مگر رات بھر جاگتے رہے رات بھر۔ وہاں پر سرحد تھا انڈیا پاکستان کا۔ تو وہاں پر اللہ اکبر اللہ اکبر۔۔۔ ڈر کے مارے۔
ثاقب: تو آوازیں آ رہی تھیں آپ کو؟
فرحت: آوازیں آ رہی تھیں تو ہم سب ڈر گئے.
ثاقب: گولیوں کی آوازیں آرہی تھیں؟
فرحت: جی آرہی تھی تکبیر اللہ اکبر اللہ اکبر.. ہم وہاں سے ہم نے کہا ہم یہاں نہیں رہیں گے. انڈیا کے قریب ہمیں یہاں سے دور بھیج دو.
ثاقب: انڈیا سے دور بھیج دو؟
فرحت: ہاں کراچی بھیج دو.
ثاقب: کیونکہ کراچی دور ہے انڈیا سے؟
فرحت: ہاں کراچی بہت دور ہے انڈیا سے سے اگر یہاں ہوں گے تو وہاں جائیں گے مار دیں گے بس اس ڈر سے کراچی آگئے۔
ثاقب: ٹرین سے؟
فرحت: جی ٹرین سے۔
ثاقب: اچھا اور وہاں مطلب پوری زندگی..مطلب شادی وادی اور سب وہاں؟
فرحت: جی، جی۔۔ 1949 میں میری شادی کراچی میں ہوئی۔
ثاقب: چلیں شکریہ بہت بہت.
فرحت: نہیں کوئی بات نہیں بیٹ۔